تعارف امیر اہلسنت

بڑے بھائی کا انتقالِ پُرملال

          والد ِمحترم کے انتقال کے بعد محترم عبدالغنی صاحب جو امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہکے ایک ہی بھائی تھے اور عمر میں آپ سے بڑے تھے،وہ بھی ٹرین کے حادثہ

 میں انتقال فرماگئے۔

اِیصالِ ثواب کی بہار:

          ایک مُبَلِّغ کا بیان ہے کہ امیرِ اَہلِسنت دامت برکاتہم العالیہنے ایک بار دورانِ گفتگو ارشادفرمایا کہ ’’بڑے بھائی صاحب کا۱۵مُحَرَّمُ الْحَرام  ۱۳۹۶ھ کو ٹرین کے حادثہ میں انتقال ہوا اور اسی سال جب ماہ رَمَضانُ المبارَک کی پہلی پیر شریف آئی تو دوپہر کے وقت میری بڑی ہمشیرہ صاحبہ نے مجھ سے چند غیر متوقع سُوالات کئے۔مثلاً ایک سُوال یہ تھا کہ’’ کیا تم کل قبْرِستان گئے تھے؟ ‘‘میں نے ذرا چونک کر کہا’’ جی ہاں ‘‘  (میرے چونکنے کی وجہ یہ تھی کہ میری ہمشیرہ کو تو صرف اتوار کی شام میرے قبْرستان جانے کا علم تھا اور ماہِ رَمَضان المبارَک میں اتوار کو نمازِ مغرب کے بعد میری گھر پر موجودگی کی وجہ سے شایدوہ یہ سمجھی ہوں گی کہ میں قبْرستان نہیں گیا) ۔ ہمشیرہ کہنے لگیں کہ تم مجھ سے چاہے کتنا ہی چھپاؤ مگر مرحوم بھائی جان نے مجھے خواب میں سب کچھ بتادیا ہے کہ تم کب کب قبْرِستان جاتے ہو ،اور یہ بھی بتایا ہے کہ وہاں تم اسلامی بھائیوں کے ساتھ مل کرنعت خوانی بھی کرتے ہو۔ مزید کہا کہ بھائی جا ن نے مجھے خواب میں اپنی قبْر کے حالات بتاتے ہوئے کہا ہے کہـ’’جب مجھے قبْر میں رکھا گیا تو ایک چھوٹا سا جانور میری طرف لپکا میں نے پاؤں کو زور سے جھٹکا دے کر اسے ہٹا دیا، اس جانور کا ہٹنا تھا کہ خوفناک


 

 

Index