تعارف امیر اہلسنت

آخری روزے ہیں دل غمناک مضطرجان ہے                              حسرتاواحسرتا اب چل دیا رمضان ہے

عاشقانِ ماہِ رمضاں رورہے ہیں پھوٹ کر                           دل بڑابے چین ہے افسردہ روح وجان ہے

الفراق والفراق اے رب عزوجل کے مہماں الفراق                             الوداع والوداع تجھ کو مہِ رمضان ہے

داستانِ غم سنائیں کس کوجاکرآہ!ہم                                  یارسول اللہ!دیکھوچل دیا رمضان ہے

سب مسلماں الوداع کہتے ہیں روروکرتجھے                            آہ! چند گھڑیوں کا اب تُورہ گیامہمان ہے

کاش!آتے سال ہوعطارکورمضاں نصیب                                 یانبی! میٹھے مدینے میں بڑا ارمان ہے

حفاظت ایمان کی فکر

        حضورِ پاک، صاحبِ لَولاک، سیّاحِ افلاک صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہٖ وسلّمنے ارشاد فرمایا: ’’اِنَّمَا الْاَعْمَالُ بِالْخَوَاتِیْمِ یعنی اعمال کادارومدار خاتمے پر ہے ۔‘‘

(صحیح البخاری ، کتاب القدر ،الحدیث ۶۶۰۷،ج۴،ص۲۷۴،دارالکتب العلمیۃ بیروت)

              امیرِ اہلِسنّتدامت برکاتہم العالیہحفاظتِ ایمان کے بارے میں بہت حُسّاس واقع ہوئے ہیں۔صفر المظفر ۱۴۲۴ھ میں امیرِ اہل ِ سنتدامت برکاتہم العالیہکی طرف سے مرکزی مجلسِ شوریٰ اور دیگر مجالس کے اراکین وغیرہ کے نام لکھے گئے ایک کھلے خط کی ابتداء میں ایمان کی حفاظت سے متعلق کی جانے والی ’’فکر ِمدینہ‘‘ کا پر تاثیر اندازملاحظہ ہو،…

       ’’(بعدِ سلام تحریر فرمایا)یہ الفاظ لکھتے وقت آہ! میں مدینہ منورہ سے بہت دور پڑاہوں۔ مدینہ منورہ میں رات کے تقریباً تین بج کر ۲۱ منٹ اور پاکستان میں پانچ  بج کر ۲۱ منٹ ہوئے ہیں ، میں اپنی قیام گاہ کے مکتب میں مغموم و ملول قلم سنبھالے آپ حضرات کی بارگاہوں میں تحریراً دستک دے رہاہوں۔ آج کل یہاں طوفانی ہوائیں


 

 

Index