تعارف امیر اہلسنت

صبر

           اَمیرِ اَہلسنّت دامت برکاتہم العالیہکے مَحلے میں رہنے والے ایک اسلامی بھائی نے جو آپ کو بچپن سے جانتے ہیں ،حلفیہ بتایا کہ اَمیرِ اَہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ بچپن میں بھی نہایت ہی سادہ طبیعت کے مالک تھے۔ اگر آپ کو کوئی ڈانٹ دیتا یا مار تا تو انتقامی کارروائی کرنے کی بجائے خاموشی اختیار فرماتے اور صبر کرتے ،ہم نے انہیں بچپن میں بھی کبھی کسی کو برا بھلا کہتے یا کسی کے ساتھ جھگڑا کرتے ہوئے نہیں دیکھا۔

عاجزی وانکساری

          سرورِ کونین ،نانائے حسنین صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم  نے ارشاد فرمایا:’’جو کوئی اللہ تعالیٰ کے لئے عاجزی اختیار کرتا ہے اللہ تعالیٰ اس کا درجہ بلند فرماتا ہے۔ ‘‘

(صحیح مسلم، کتاب البرو الصلۃ ، باب ا ستحباب العفو والتواضع ، الحدیث ۲۵۸۸، ص۱۳۹۷)

        عظیم مذہبی رہنما ہونے کے باوجود اَمیرِ اَہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ کی تواضع وانکساری کا یہ عالم ہے کہ اپنے محبین ومتعلقین کے درمیان بھی اپنے لئے کسی امتیاز کو پسند نہیں فرماتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جب اَمیرِ اَہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ احیائے سنت کے لیے سفر پرروانہ ہونے والے مدنی قافلے میں شریک ہوتے تو متعددباردیکھاگیاکہ پہلے نشستوں پراپنے اسلامی بھائیوں کوبٹھاتے اورجگہ نہ ملنے کی صورت میں کبھی کبھی آپ نشست سے نیچے ہی بیٹھ جاتے ۔ آپ کی اس قدرعاجزی دیکھ کربعض اوقات لوگوں کی آنکھوں سے اشک جاری ہوجاتے۔

         


 

 

Index