تعارف امیر اہلسنت

تیراثانی کہاں !شاہِ کون ومکاں                              مجھ ساعاصی بھی اُمّت میں ہوگاکہاں !

تیرے عَفْووکرم کاشہِ دوجہاں !                            کیاکوئی مجھ سے بڑھ کربھی حقدارہے

(مغیلانِ مدینہ از امیرِ اہلسنّت مدظلہ العالی)

نِرالی روانگی :

       جب مدینہ پاک کی طرف روانگی کی مبارَک گھڑی آئی تواس وقت جو آپ دامت برکاتہم العالیہ کی کیفیت تھی اس کو کماحقہ صفحہ قرطاس پر لانا ممکن نہیں۔ائیر پورٹ پر عاشقانِ رسول کا ایک جمِ غفیر آپ کو الوداع کہنے کے لئے موجود تھا۔ مدینے کے دیوانوں نے آپ کو جھرمٹ میں لے کر نعتیں پڑھنا شروع کردیں۔

       سوزوگدازمیں ڈوبی ہوئی نعتوں نے عشاق کی آتش ِعشق کو مزید بھڑکا دیا۔غمِ مدینہ میں اٹھنے والی آہوں اور سسکیوں سے فضاسوگوار ہوئی جارہی تھی۔ شاید ہی کوئی آنکھ ایسی ہوگی جو فراق ِطیبہ میں نَم نہ ہو،خود عاشق مدینہ امیرِ اَہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ

کی کیفیت بڑی عجیب تھی۔ آپ کی آنکھوں سے آنسوؤں کی جھڑی لگی ہوئی تھی۔ اورآپ دامت برکاتہم العالیہ اپنے ان اشعار کے مصداق نظر آرہے تھے،…

آنسوؤں کی لڑی بن رہی ہو                         اور آہوں سے پھٹتا ہو سینہ

وردِ لب ہو مدینہ مدینہ                                      جب چلے سوئے طیبہ سفینہ

      

عشق و اُلفت کا یہ نرالا انداز ہر ایک کی سمجھ میں تو آنہیں سکتا۔ کیونکہ حاضری طیبہ کے لئے جانے والے تو عُموماً ہنستے ہوئے ،مبارَکبادیا ں وصول کرتے ہوئے


 

 

Index