تعارف امیر اہلسنت

اور تشریف لاتے ہیں۔ اس منفرد اندازِ فکر کی بَرَکت سے شادی کی تقریب (جو انسان کو عموماًغفلت میں مبتلا کردیتی ہے ) پُر سوز انداز میں گزارنے کی سعادت حاصل ہوئی ۔

 پہلا سفرِ حج

       مُدَّت دراز تک فراقِ مدینہ میں تڑپتے رہنے کے بعد بالآخر   ۱۴۰۰ ھ میں پہلی بار امیرِ اہلِسنّت دامت برکاتہم العالیہکو میٹھے مدینے کی پر کیف حاضری کا پروانہ ملا۔

 

 

صبا!اس خوشی سے کہیں مرنہ جاؤں

دیارِ نبی سے بُلاوا ملاہے

 

       بس اب کیا تھا دل میں پہلے ہی سے سلگنے والی عشقِ مصطفٰے صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم  کی آگ اب مزید بھڑک اُٹھی۔ اشک ہیں کہ تھمنے کا نام نہیں لیتے ،عشق کے انداز بھی نرالے ہوتے ہیں۔ ہجروفراق میں بھی اشکباری ،حاضری کی اجازت پر بھی گریہ و زاری…آپ دامت برکاتہم العالیہ کی منفرد اور پرسوز کیفیات کی عکاسی ان اشعار سے ہوتی ہے :

مجھ کودرپیش ہے پھرمبارَک سفر                                    قافِلہ پھر مدینے کا تیار ہے

نیکیوں کا نہیں کوئی تَوشہ فقط                                 میری جھولی میں اَشکوں کااِک ہارہے

کوئی سَجدوں کی سوغات ہے نہ کوئی                        زُہدوتقویٰ مِرے پاس سرکارہے

چل پڑاہوں مدینے کی جانب مگر                                     ہائے سرپر گناہوں کا انبار ہے

جُرم وعصیاں پہ اپنے لَجاتاہوا                                          اور اَشکِ نَدامت بہاتاہوا

تیری رحمت پہ نظریں جماتاہوا                                       در پہ حاضر یہ تیرا گنہگارہے

 

Index